Origin of Pindaris

By Barmazid

The origin of the Pindaris is shrouded in obscurity. They first come into notice as a class of unpaid auxiliaries attached to Maratha armies of the eighteenth century who lived by plunder and devastation of the enemy country. The name is Marathi and probably derives from two words, meaning “bundle of grass” and “who takes” [1]. They were adventurers and freebooters of every class and denomination — Afghans, Marathas, or Jats [2].

It is said that the earliest reference to Pindaris was made by Manucci who wrote, “Along with the armies [of Mughals in Deccan campaigns] there march privileged and recognised thieves, called Bederia (Bidari) ; these are the first to invade the enemy’s territory, where they plunder everything they find” [3]. William Irvine, the translator, raises the question whether this is really a reference to the Pindaris or simply to the Bidaris, a completely different group. The Pindaris were essentially a phenomena of the last quarter of the eighteenth century. Bhimsen’s memoir of Aurangzeb Deccan campaigns, Tarikh-i-Dilkusha, does not mention the Pindaris . Bhimsen was no stranger to the region that later became the main Pindari zone, since both he and his father had served in Malwa and Deccan for a long time [4].

The leaders of Pindaris who emerged between 1806 through the Maratha War of 1817-8119, were principally Karim Khan, Chito, and Wasil and Dost Muhammad. Karim Khan was perhaps the best known leader of the Pindaris. He was the son of a Rohilla, and rose to power in the service of the Nawab of Bhopal. Chito was a Jat who rose in the Raja of Berar’s service, and became a leader of the Pindaris [5].

A common misunderstanding regarding Amir Khan (d.1834) of Tonk, Rajasthan, was the assumption that he was a Pindari. This is not correct [6]. Edmonstone drew a distinction between the ‘organized troops of the Pathan leaders‘ and the Pindaris. The former consisted chiefly of infantry and artillery regularly formed and disciplined, to which was also added cavalry such as was “usually found in the ranks of native armies” [7]. Even Lord Hastings did not fully identify Amir Khan with the Pindaris.

Amir Khan of Tonk, circa 1790-1800. By Vana Bhatti

References:

1- https://www.britannica.com/topic/Pindaris

2. “A Brief History of the Indian Peoples”, by Sir William Wilson Hunter, p-202

3- Storia da Moger, Vol-2, p-459

4- Sindias and the Raj: Princely Gwalior C. 1800-1850”, By Amar Farooqui, p-40

5- https://asianstudies.github.io/area-studies/SouthAsia/Ideas/Pindaris/1971.html#R05

6-  https://www.dawn.com/news/883557.

7- [British Policy Towards the Pathans and the Pindaris in Central India, 1805-1818, p-226.

Dr. Zakir Hussain, the third President of India

Pic source: Syed Naseer personal collection

Dr. Zakir Hussain, the third President of Indian republic (1967-1969), was born on 8 February, 1897 in  Hyderabad, which is presently the capital of Telangana. His father Fida Hussain Khan and mother Nazneen Begum were originally belonged to the small town of Uttar Pradesh known as Qaimgaj . His patriarch who was popular with title Mad Akhun (the great teacher) was an Afridi Pathan of Kohat settled in Qaimganj (1715). He was revered as a great scholar & mystic among the Bangash settlement of Qaimganj. His grandfather Ghulam Hussain Khan did military services in the court of Nizam where he made a close friendship with Asfarul Mulk ( Dr, Zakir Hussian, Quest for Truth by Ziaul Hasan Faruqi, 1999). After retirement he came back to Qaimganj & sent his Fida Hussain Khan to Hyderabad for the business. Along with business, he completed his degree in law & also started a press in Begum Bazar that publish legal literature. Ain-e-Deccan (Law of the Deccan), a famous legal publication of Hyderabad was launched by him. Unfortunately, Fida Hussain Khan passed away at the early age of thirty nine due to Tuberculosis when Zakir Hussain was ten year old who was third in line among his seven brothers.

Portrait of Fida Hussain Khan, b 1868 at Qaimganj, a lawyer & businessman Pic source: Dr. Zakir Hussian a Pictorial Biography, published by National Museum Delhi
Dr. Zakir Hussain Pic source: Wikiimages

He started his schooling at the Government high school, Hyderabad. Till the age of ten Zakir Hussain was taught Arabic, Urdu, Persian & English languages at home also with special tutors. When his father died in 1907, the family migrated to Qaimganj (Farrukhabad) district of UP along with his mother. He joined the Islamia high school at Etawah in 1908 and completed his graduation from the Mohammedan Anglo-Oriental College at Aligarh in 1918. He studied M.A. in Economics and did Law. He became the leader of the Students’ Union while he was in the college. He had an excellent knowledge in National and International affairs and got recognition as a very good orator. Zakir Hussain entered into the National Movement under the influence of Mahatma Gandhi and took part in Khilafat and Non-Cooperation Movements. He was offered Naib Tehsildar post by the British, which was refused by him true to his National ideology. He wanted to train the youth towards the National Movement. Thus, he joined as a Lecturer in the Jamia Milia Islamia College, which was founded during the Khilafat and Non Co-operation Movement. Upon his return from Germany in February, 1926, he totally dedicated himself to the institution. Due to the relentless  efforts of  Zakir Hussain, the institution has been praised as the ‘Healthy child of the Non Co-operation Movement’. He encouraged the students and the teachers of the Jamia to participate in the Salt Satyagraha in 1930. When Gandhi started collecting ‘Swarajya Fund’, Jamia students, teachers and employees donated for the first time to  the fund under his guidance. Dr. Zakir Hussain  believed that Hindu-Muslim integrity was essential for the liberation of country from the British. Hence, he conducted several programmes and campaigns in this regard. After Independence, he took the responsibility as the Vice Chancellor of the Aligarh Muslim University on the request of Moulana Abul Kalam Azad and continued in that post till 1956.

He was the member of Rajya Sabha during 1952 and 1956. Dr. Zakir Hussain became the Governor of Bihar in 1957 and the President of India in 1967. He strengthened the Indian National Movement by imparting National Education in the minds of youth of the country.  Dr. Zakir Hussain went on a tour to Assam and returned to the Rashtrapati Bhavan  on 3  May, 1969. On the same day in the evening he breathed his last. He was buried on the campus of the Jamia Milia Islamia, the institution which he adored very much. On the 40th day of his death (Chehlum) ceremony i.e., 11 July, 1969, a commemorative postal stamp was issued by the Government of India.

Commemorative Postal stamp 11July 1969 Source: Istamp, Gallery

Among the galaxy of the luminous star that had shed their radiance on the firmament of our national life, Dr. Zakir Hussain occupies a pride of place. Moulded in the great tradition set before us by the Father of the nation, Mahatma Gandhi Zakir Sahab was the embodiment of all pervading humanism.

V.V.Giri, Rashtra Pati Bhawan, New Delhi, Retrieved from http://www.istampgallery.com/dr-zakir-husain-2/

TIPU SULTAN (1750-1799)

Pic source: Syed Naseer Album

Syed Naseer|Tipu Sultan, the ‘Tiger of Mysore’, was a great visionary who exposed the expansionist designs of the British imperial forces. He gave a clarion call to his fellow countrymen and native rulers  to  unite and fight against the East India Company.  Tipu was born on 10 November, 1750 at Devanahalli village of Kolar district, Karnataka State where Hyder Ali, who was famous as ‘the Nepoleon of South India’ was his father and  Fatima Fakhr-un-nissa was his mother. He received proper training in martial arts  and participated in several wars along with his father.  Tipu became the ruler of  Mysore in 1782,  after the  death of  his father  Hyder Ali.  While taking charge of  Mysore  he declared to  his people : ‘If I oppose you I could lose my paradise, my life and my happiness. The happiness of the people is my happiness. I don’t think that whatever I like is good. But, I consider that whatever is the wish of my people is my wish. Those who are the enemies of my people are my enemies. And those who are troubling my people are deemed to be declaring war against me.’ Tipu kept his promise all  through  his life.  While  facing continuous attacks  by the Nizam  of  Hyderabad and the Marathas, Tipu sultan was able to expand  his kingdom from  River Krishna in the North to Dindigal in the South, for about 400 miles and from Malabar in the West to the Eastern Ghats, about 300 miles, in his 17 year rule.

Edwards Orme painting of Tipu Sultan from the ‘Picturesque Scenery in the Kingdom of Mysore’ by James Hunter, Source: British Library

Tipu Sultan encouraged modern  trade, industry, agriculture and civil engineering. He tried to reform petty criminals by assigning them  community work just like plantation etc., as punishment. Tipu Sultan was a polyglot,  he was  well versed in  Kannada, Telugu, Marathi, Arabic, Persian, Urdu and French. He worked hard for the promotion of education. Tipu , like his father held  a secular  out look and was  impartial towards all religions. The British identified Tipu as their enemy number one in south India. The  jealous Nizam of  Hyderabad and Marathas  could not digest the success of Tipu and joined hands with the East India Company against him.

A painting from the siege of Seringapatam, C 1800 by Henry Singleton, Source: Wikiimages

They all attacked Seringapatam, capital of  Mysore state, which led to the  historical fourth war of Mysore. Tipu sultan entered the battlefield of Seringapatam  to defend his people and the state,  Due to treason committed by his diwan, Mir Sadiq and others who paved the way for the enemy to enter the fort of Seringapatam, Tipu Sultan suffered defeat.  He died on 4 May, 1799 fighting against enemy in the battle field.

Sartajul Awliya Mujadidd-e-Azam Muhiyudin Hazrat Abdul Qadir Jilani Rahmatullah by Shams Jilani

سر تاج الاولیاءمجدد ِ اعظم محی الدین حضرت عبد القادر جیلانی علیہ رحمہ

Walter’s photograph An aerial view Sheikh Abdul Qadir Jilani mosque, Baghdad, 1925

قارئین گرامی ! جس طر ح عوام النا س نے ربیع الاول کو حضور(ص) کا مہینہ قرار دے رکھا ہے، با لکل اسی طر ح ربیع الثا نی کو حضرت عبد القاد رجیلا نی علیہ رحمہ کا مہینہ قرار دے رکھا ہے اور ا ُس کو با رہ وفات اگر عوامی زبا ن میں کہتے ہیں تو اِس کو گیار ہویں شریف کا مہینہ انکی مناسبت سے کہتے ہیں ۔اور اس طر ح فا ئدہ یہ ہوا کہ ایک کے بجا ئے امت کو دو مہینے مل گئے ۔یہ دونو ں مہینے ہی ذکر اور فکر میں گزر نے چا ہیئے ۔مگر ظلم یہ ہے کہ ا س میں بھی سوا ئے ان کی کرا ما ت کے ذکر کے اور کچھ نہیں ہو تا۔ جس کا انہو ں نے کبھی ا پنے خطبا ت میں سوا ئے اپنی مخصوص محفلو ں کے ذ کر نہیں فر مایا۔وجہ یہ تھی کہ ان کی زندگی کہ کئی پہلو تھے ایک عوام النا س اور علماءکے لیئے ، تو دوسرا طا لبان ِ معرفت کے لیئے۔ لہذا انہو ں نے دو نوں کو کبھی گڈ مڈ نہیں کیا ۔

لیکن اس کے بر عکس واعظین کاسا را زور کرامات پر ہی رہتا ہے ۔جس سے عوام الناس کو کو ئی فا ئدہ نہیں پہنچتا ۔اس میں کو ئی شک نہیں کہ وہ صا حب ِ کشف و کرا ما ت تھے اور اس کا سب سے بڑا ثبو ت جو ملتا ہے وہ ابن ِ کثیر کے یہا ں بھی ہے تحریر فر ما تے ہیں کہ “ عبد القادر جیلا نی کی کرا ما ت اس کثر ت اور تواتر کے سا تھ ملتی ہیں ان کی تر دید نہیں کی جاسکتی اور انہو ں نے حضور( سیرت کی کتاب(البدایہ النہایہ ) میں بھی ان کوصاحب کشف بزرگ لکھا ہے، نیز یہ کہ لوگوں نے ان سے بڑا فا ئدہ اٹھا یا  ً مگر جیسا کہ ہم پہلے عرض کر چکے ہیں کہ عوا می مجا لس میں انہو ں نے اس کو کبھی مو ضو ع نہیں بنا یا ،عوامی مجا لس میں ان کو مو ضو ع بنا نا با لکل ایسا ہے جیسا کہ کسی پہلے درجہ کے طا لب علم کے سا منے پی ایچ ڈی کا مقا لہ پڑھا جائے ۔اس کو اقبا ل نے بڑی خو بصو رتی سے اپنے ایک شعر میں سمویا ہے  اقبا ل یہا ں ذکر نہ کر لفظ ِ خو دی کا  مو زوں نہیں مکتب کے لیئے ایسے مقا لا ت ً ہما رے ایک دو ست نے اس کو ایک مر تبہ حلقہ تفسیرمیں ،قرآن سے ہی ثا بت کیا کہ یہ عوامی مضمو ن نہیں ہے۔ اس لیئے جو اسے نہیں سمجھتے ہو ں انہیں منہ کھولنے کی گنجا ئش نہیں ہے !اور نہ عوام الناس کو سمجھنے کی تکلیف دی جا ئے، ورنہ وہ را ستہ بھٹک جا ئیں گے۔ اور اس کی مثا ل انہو ں نے حضرت مو سٰی علیہ السلام اور حضرت خضر علیہ السلام کے قصے سے دی ۔ ان کا استد لا ل وہی تھا جو حضرت خضر نے حضرت مو سٰی سے فر ما یا کہ “ آپ چپ کیسے رہ سکتے تھے ۔جب جا نتے ہی نہیں تھے کہ میں نے یہ تمام افعال اللہ کی مر ضی کے مطا بق انجام دیئے “تو یہا ں بھی صورت حا ل یہ ہی ہے کہ جو منکر ہیں۔ ان کی سمجھ میں ہی نہیں آسکتا ،اور جو عوام ہیں، یہ مسا ئل ان کی سمجھ سے یو نہیں با ہر ہیں۔ اور وہ مو جو دہ دور کے سجا دہ نشینو ں کو ان پر قیا س کر کے ان کو بھی کو ئی گو شہ نشین اور مر یدو ں کے نذرا نو ں پر گزر کر نے والا سجا دہ نشینوں جیساقیا س کر لیتے ہیں ۔اور اس کا م پر پر دہ پڑجا تا ہے، جس کی بنا پر وہ محی الدین کہلا ئے یعنی “ دین کو زند ہ کر نے والے  “اور یہ مہینہ بھی اسی کشمکش کا شکا ر ہو جا تا ہے۔ بجا ئے استفا دہ حاصل کر نے کے ،جو منکر ہیں اتنا حد سے تجا وز کر جا تے ہیں کہ اسے شرک کہتے ہیں اور دوسروں کااس مہینہ میں سا را زور اسی پر ہو تا ہے کہ ان کی کرا ما ت کیا تھیں ؟ جبکہ وہ خود اپنی کتاب غنیة الطا لبین میں اس کو پا نچو یں در جہ کی چیز فر ما تے ہیں ۔اور یہ کہ“ یہ اللہ اور بندے کے در میا ن پردے کا دور ہو تا ہے، جب وہ اس سے بھی گزر جا تا ہے تب اسے عرفا ن حا صل ہو تا ہے ؟ جبکہ دوسرا گروہ اس کو منا نے ان کے نام پر نذرونیا ز اور جا نور پا لنے اور ذبح کر نے کو شرک قرار دیتا ہے اور بہ زعم ِخود تقویٰ کی بنا پر ایسی با توں پر لب کشا ئی کر تا ہے،جن کا اس کو علم ہی نہیں ہے اور ان تما م غلط کا ریو ں کا جو عوام ان کے نا م پر کر تے ہیں ذمہ دا ر قرار دے کر اپنے آپ تہمت لگانے کا مر تکب ہوتا ہے ۔اور اس پر ظلم یہ کہ استدلال کے لیئے سورہ بقر کی وہ آیت جس میں ۔۔ مااھل بہ لغیر اللہ ۔۔۔ الخ کا ذکر آیا ہے پیش کرتا ہے ۔ اس آیت کی تفسیر حضرت عبدا للہ ابن ِ مسعود نے فرمائی ہے ما ذبح للطوا غیت ۔۔۔ یعنی جو جانور طاغو توں کے نام پر ذبح کیا جا ئے وہ حرام ہے ۔اس تفسیر کی روشنی میں کو ئی کہہ سکتا ہے کہ کو ئی مسلمان کسی طا غوت (کسی شیطا نی طا قت )یعنی دیوی دیو تا وغیرہ کے نام پر ذبح کر سکتا ہے ؟ با لا خر یہ اگر پا لے ان کے نام پر گئے تھے تو بھی ان کو یہ مقام اسلام کے اتبا ع، رسول اور وحدانیت کی بنا پر ملا نہ کہ( نعوذباللہ) طاغوت کی پیرو ی کی بناپر۔اورنہ ہی ان کے ما ننے والے ایسے سمجھے جاسکتے ہیں ! لہذا یہ اللہ ہی کی محبت میں پا لے جا تے ہیں اور اللہ ہی کے نا م پر ذبح کیئے جا تے ہیں ۔ اور پھر اگر بیچ میں یہ لغزش مان بھی لی جا ئے، تو اس حدیث کی بنا پرجو اہل ِ دوزخ اور جنت کے بار ے میں ہے ۔ ۔۔۔وانماالاعما ل بخواتیمھا ۔ (کہ ثواب کا دارومدار عمل کے مرتبہ نتا ئج پر ہے ) اگر ان کے نا م پر بکرا پالا بھی تھا تو بھی آخری نتیجہ یہ ہے کہ وہ ذبح اللہ ہی کہ نام پر ہوا ۔ اور یہ دو نوں طرف لا علمی ہے ۔جو ایسا کرا تی ہے اگر دو نوں عقیدت یا تعصب کی عینک اتا ر کر دیکھیں، تو ان کا نو را نی چہرہ نظر آ جائیگا ۔جنہوں نے بگڑی ہو ئی امت کو سنبھا لنے کی کو شش کی اور آج تک ان کا صحیح اتبا ع کر نے والے سا ت سو سال سے فیض پاتے آرہے ہیں ۔جس کی وجہ سے وہ محی الدین کہلا نے کے مستحق بنے ۔ہم آپ کو وہ روا یتی با تیں سنا نے کے بجا ئے جو آپ پہلے ہی بہت سن چکے ہیں، ان کی زند گی کی اصل شبیہ پیش کر رہے ہیں ۔جس کے لیئے اللہ تعا لیٰ نے انہیں اسوقت بھیجا تھا ۔پہلے تو ہم آپ کو اس دور کے با رے میں بتا نا چا ہیںگے کہ جب انہو ں نے آنکھ کھو لی تو وہ دو ر تھا جس میں سلجو قیوں نے ابو بہ کو شکست دے کر عبا سی سلطنت دو با رہ قا ئم کر لی تھی ۔مگر پور اعا لم ِ اسلام آج کی طر ح سیکڑوں با د شا ہتو ں میں بٹا ہوا تھا اور سب ایک دو سرے سے جو ع الا رض میں مبتلا ہو نے کی سبب دست بہ گر یبا ں تھے۔ جبکہ خلیفہ کا کا م اتنا رہ گیا تھا کہ جو جیت جا ئے اس کو سند ِ با د شا ہی عطا کر دے ۔گو اس وقت جو خلیفہ تھا وہ دیندا ر تھا اور علما ءاور صو فیاءدو نوں کا احترام کر تاتھا۔ اور سا تھ لے کر چلنے کی کو شش بھی کر تا تھا ، مگر عوام اور رؤسا ءگمرا ہ ہو چکے تھے لہذا وہ ہر ایک کے کنٹرول سے با ہر اور سا زشو ں میں مصروف تھے۔ اور آج کی طرح ہر ایک باد شا ہ ان کو را ضی رکھنے اور اپنے تخت کو بچا نے میں مصروف رہتا تھا ۔ ایک طر ف شا م پر عیسا ئی حملہ آور تھے تو دوسری طر ف با طنی فر قہ کے سر برا ہ حسن بن سبا ح کے معتقدین تبا ہی مچا ئے ہو ئے تھے ۔ جو منہ کھو لتا، چا ہے وہ عا لم ہو یا با د شاہ اور سردار، وہ اپنے فدا ئین سے اسے قتل کروا دیتے اسی دوران انہوں نے ظلم یہ کیا کہ نظا م الملک طو سی  کو جو کہ بہت بڑا صا حب علم اور بہترین منتظم تھا قتل کرا دیا۔ اس طر ح سلجو قی سلطنت بھی انتشار کا شکا ر ہو گئی ۔ایسے میں حضرت عبد القادر جیلا نی (رض) کی پیدا ئش ایک انتہا ئی بزرگ گھرا نے میں ہو ئی اور بچپن سے ہی ان کے جو ہر کھلنے لگے ۔آخر جب انہو ں نے دیکھا کہ وہ چھو ٹا سا قصبہ ان کی جو لا نگا ہ کے لیئے بہت چھو ٹا ہے تو وہ حصو ل علم کے لیئے بغداد تشریف لے گئے اور راستہ میں اپنی سچا ئی کی بنا پر ڈا کو ؤ ں کو مطیع کر تے ہو ئے بغداد اس طر ح پہنچے کہ اس واقعہ کے شا ہد اور شہرت ان سے پہلے بغداد پہنچ چکی تھی۔ یہاں آنے کے بعد انہوں نے پہلے تو حضرت حماد بن مسلم دبا س  (رح)جو اس دور کے نامور عارف تھے، کی خدمت میں حا ضر دی ، جنہو ں نے انہیں ہا تھو ں ہا تھ لیا۔مگر تھو ڑے دنو ں بعد انہیں یہ محسوس ہوا کہ صرف علم با طنی ہی کا فی نہیں ہے لہذ اس وقت کے عظیم فقیہ حضرت قاضی ابو سعید المبا رک (رح) کی خدمت میں حا ضرہو ئے اور ان سے علم القر آن و حدیث اور فقہ وغیرہ حا صل کیئے اور جب انہو ں نے یہ کہہ کر ان کو فا رغ کر دیا کہ “ اے عبد القادر ہم تو تم کو الفا ظ ِ حدیث کی سند دے رہے ہیں ورنہ حدیث کے معنی میں تو ہم تم سے استفا دہ کر تے ہیں۔کیو نکہ بعض احا دیث کے معنی جو تم نے بیا ن کیئے ہیں ان تک ہما ری فہم کی رسا ئی نہیں تھی “ اس کے بعد بھی ان کا ابھی شا ید علم و عرفا ن تشنہ تھا ،جس لیئے وہ تخلیق کرئے گئے تھے۔ لہذا وہ صحرا نوردی کر تے رہے اور جب عر فا ن حا صل ہو گیا تو ان کو تبلیغ کا حکم مل گیا اور وہ اسی مدرسہ با ب الازج میں درس دینے لگے ۔وہا ں عالم یہ ہو گیا کہ رضا کا ر اور مخیر حضرات دن را ت اس کے حدود بڑھا تے رہے پھر بھی یہ مد رسہ شا ئقین علم کی کثرت کی بنا پر با زار اور سڑکو ں کو بندکر نے لگا۔ تو آپ نے عید گا ہ میں درس دینا شروع کر دیا جس میں بہ یک وقت ستر ہزا ر سا معین تک درس میں شامل ہو تے تھے اور چا ر سو دوا تیں اور قلم، قلمبند کر نے کے لیئے گنی گئیں ۔مگر کما ل یہ تھا کہ آپ کی آواز بغیر کسی مکبّر کے ہر کو نے میں پہونچتی تھی اور سیکڑوں آدمی روزانہ مسلمان ہو تے اور بقیہ اپنے دین کو درست کر نے کی کو شش کر تے ۔اپنی تقا ریر میں آپ مسلما نو ں کے ہر طبقے کو بری طر ح لتاڑتے جس میں امرا ءعلما ءاور گدی نشین سبھی شا مل تھے ۔ گو کہ آپ نے کئی خلفاءکا دور دیکھا مگر نہ تو کسی خلیفہ کی ہا تھ ڈا لنے کی جرا ءت ہو ئی نہ کسی اور کی جبکہ فدا ئین ہی با ت با ت پر علما ءکو قتل کر رہے تھے ۔یہ بھی ایک زندہ کرا مت تھی۔ جبکہ آپ کبھی نہ در با ر میں تشریف لے گئے نہ اپنے یہا ں امرا ءیا خلیفہ کا آنا پسند فر ما یا ۔یاد رہے ان سے پہلے لا تعداد علما ءانہیں جا بر خلفاءکے ظلم کا شکا ر ہو ئے جن میں فقہ حنبلی کے با نی حضرت امام احمد حنبل(رح) بھی تھے جن کے فقہ کو انہو ں نے دو با رہ زندہ کیا۔ جس کی وجہ سے آپ کا لقب محی الدین پڑا، حضرت امام حنبل(رح) بے انتہا مظا لم کا شکا ر ہو ئے اور اپنی جا ن اللہ کے سپر د کی ۔ لیکن اس کے با وجود بھی حضرت عبد القادر جیلانی(رض) اپنی تقاریر میں انہیں بری طر ح مخا طب فر ما تے تھے،اس کے چند نمو نے ہم آگے پیش کر رہے ہیں۔ آپ کا زمانہ “ عذاب ِ تا تا ر “مسلما نوں پر نا زل ہو نے سے پہلے کا تھا۔ چو نکہ اللہ تعا لیٰ کی سنت رہی رہی ہے کہ وہ ہر عذا ب سے پہلے کو ئی نبی(ع) ضرورمبعوث فر ما تا تھا ۔مگر حضو ر(ص) کے بعد کو ئی نبی نہیں آنا تھا ۔لہذا پہلا مجدد چھٹی صدی ہجری میں اتما م حجت کے لیئے ان کوبنا کر بھیجا اور جب وہ کسی کو کہیں بھیجتا ہے تو کرا ما ت سے بھی مسلح فرما دیتا ہے اور علم سے بھی، نیز اس کی حفا ظت بھی خو د فر ما تا ہے۔ اس تمہید سے جو بڑی طویل ہے آپ نے اندا زہ لگا لیا ہو گا کہ وہ کس معیا ر کے بزرگ تھے اور ان کا مشن کیا تھا، جس میں انہیں تا ئید غیبی حا صل رہی ،تو تعجب کی با ت کیا ہے ؟ لہذا انہیں ما ننے والوں کے غلو کوبنیا دبناکر ان  کومطعون کر نا خو د اپنی عاقبت خراب کر نا ہے۔ اب ہم چند خطبا ت کے مختصر اقتبا سات پیش کر کے کر اس مضمو ن کو ختم کر رہے ہیں ۔

View outside Hazrat sheikh Abdul Qadir Jilani shrine/Pic by Tawarikh Khwani
View this post on Instagram

Sheikh Abu Masood bin Abi Bakr Harimi (r.a) reports that there was a very great Saint by the name of Sheikh Ahmed Jaam (r.a) He used to travel on a lion wherever he went. In every city that he visited, it was his habit to ask the people of the city to send one cow for his lion’s meal. Once, he went to a certain city and requested from the Saint of that city a cow for his lion. The Saint sent the cow to him and said, “If you ever go to Baghdad, your lion will receive a welcome invitation.” Sheikh Ahmed Jaam (r.a) then journeyed to Baghdad Shareef. On arriving in Baghdad, he sent one of his disciples to al-Ghawth al-A’zam (r.a) and commanded that a cow be sent to him, as a meal for his lion. The great Ghawth was already aware of his coming. He had already arranged for a cow to be kept for the lion. On the command of Sheikh Ahmed Jaam (r.a) Sheikh Abdul Qadir Jilani (r.a) sent one of his disciples with a cow to him. As the disciple took the cow with him, a weak and old stray dog which used to sit outside the home of Sheikh Abdul Qadir Jilani (r.a) followed the disciple. The disciple presented the cow to Sheikh Ahmed Jaam (r.a) who in turn signalled the lion to commence feeding. As the lion ran towards the cow, this stray dog pounced on the lion. It caught the lion by its throat and killed the lion by tearing open its stomach. The dog then dragged the lion and threw it before al-Ghawth al-A’zam (r.a) On seeing this, Sheikh Ahmed Jaam (r.a) was very embarrassed. He humbled himself before the great Ghawth and asked for forgiveness for his arrogant behaviour. This incident shows the strength of a dog that only sat outside the stoop of Sheikh Abdul Qadir Jilani (r.a) This was due to its Nisbat to the blessed stoop of the great Saint. It also proves that even animals recognise and are loyal to the the Awliya Allah. How wonderful would it be to have the same loyalty to a friend of Allah as well! . May Allah keep us in the company of pious people. Ameen! . @definedbydeen #islam #iman #quran #sunnah #hadith #allah #allahuakbar #god #muhammad #peacebeuponhim #faith #mercy #forgiveness #ghouseazam #jilani #abdulqadirjilani #tariqa

A post shared by Defined by Deen (@definedbydeen) on

 با شند گا ن بغداد سے خطاب ۔ اے بغداد کے رہنے والو! تمہا رے اندر نفاق زیا دہ اور اخلا ص کم ہو گیا ہے اور اقوال بلا اعما ل بڑھ گئے ہیں اور عمل کے بغیر قول کسی کا م کا نہیں ،تمہا رے اعما ل کا بڑا حصہ جسم ِ بے روح ہے ؟کیو نکہ روح ِاخلا ص تو حید و سنت ِ رسول اللہ (ص) پر قا ئم ہے ، غفلت مت کرو ،اپنی حا لت کوپلٹوتا کہ تمہیں راہ ملے ۔ جاگ اٹھو ،اے سو نے والو ! اے غفلت شعارو بیدار ہو جا ؤاے سو نے والو !جاگ اٹھو( اس با طل نظریہ سے با ز آؤ)کہ جس پر ابھی تم نے اعتما د کیا ( عقیدہ بنا رکھا ہے )وہ تمہارا معبود ہے اور اس سے توقع کرو کے اس کے ہا تھ میں حق تعا لیٰ نے تمہا را نفع نقصان دے رکھا ہے۔ جبکہ نفع اور نقصان پہنچا نے وا لا تمہارا معبو د اللہ ہے ۔ (اے غافلوں )عنقریب تمہیں تمہارا انجا م نظر آجا ئے گا ( نوٹ۔ بعد میں وہ ڈراوا، یا پیش گو ئی پو ری ہو کر رہی ان کے وصال فر مانے کے تھو ڑے ہی عرصہ بعد، تا تا ریوں نے، بغداد کی اینٹ سے اینٹ بجا دی (شمس) ً  در با ری علما زہا د، فقیہوں ، صوفیوں، اور سلا طین سے خطا ب “ اے علم و عمل میں خیا نت کر نے والو!تم کو ان سے کیا نسبت ،اے اللہ اور اس کے رسول کے دشمنو ! اے اللہ کے بندوں (کے حقوق )پر ڈا کہ ڈا لنے والو!تم کھلے ظلم ،کھلے نفا ق میں مبتلا ہو ،یہ نفا ق کب تک ؟ عا لمو ں اور زاہدو!با دشا ہوں اور سلطا نوں کے لیئے تم کب تک منا فق بنے رہو گے؟ کہ تم ان سے زر و ما ل شہوات (خو اہشا ت)و لذات حا صل کر تے ہو ۔تم اور اکثر با د شا ہا ن وقت اللہ کے ما ل اور اس کے بندوں کے با رے میں ظا لم ،اور خیا نت کر نے والے ہو! اے الٰہی ، منا فقوں کی شو کت کو تو ڑ دے اور ان کو ذلیل فر مایا، ان کو توبہ کی تو فیق عطا فر ما اور ظا لم کا قلع قمع فر ما دے ، زمین کو ان سے پا ک فر ما دے یا ان کی اصلا ح فر ما دے ( آمین )  “ تم رمضان میں اپنے نفسوں کو پا نی سے رو کتے ہو اور جب افطار کا وقت آتا ہے تو مسلما نوں کے خون سے افطار کرتے ہو، ان پر ظلم کر کے جو مال حا صل کیا گیا ہے اس کو نگلتے ہو ،اے لو گوں تم سیر ہو کر کھا تے ہو اورتمہا رے پڑوسی بھو کوں مر تے ہیں۔پھر دعویٰ کر تے ہو ہم مو من ہیں ۔تمہارا ایمان صحیح نہیں ہے۔ دیکھو !ہما رے نبی(ص) اپنے ہا تھ سے سا ئل کو دیا کرتے تھے ،اپنی اونٹنی کو چا رہ ڈا لتے تھے ،اس کا دودھ دو ہتے ۔اپنا کرتا سیا کر تے ۔تم ان کی متا بعت کا دعویٰ کیسے کر سکتے ہو جبکہ افعال میں ان کی مخا لفت کر تے ہو،تم میں کو ئی بھی نہیں ہے جس پر توبہ واجب نہ ہو ۔ (حضرت عبد القادر جیلانی کی کتاب فتوح الغیب سے اقتبا سات)اب فیصلہ میں آپ پر چھو ڑتا ہو ں ۔کہ ان میں سے کو نسا پیغام خلا ف شرع ہے ؟یا یہ بزرگ اس آیت کی تفسیر ہیں۔ تر جمہ ً“جنہیں ہم نے پیداکیا ان میں  کچھ لو گ ہیں جو حق کی طرف راہ دکھلاتے ہیں اور اسی کے مطا بق انصاف کر تے ہیں ً ( ١٨١:٧)

https://www.instagram.com/p/BwBGqWWDK86/

A fascinating tale of Samosa

A food story of Indian snack by Indo-Islamic Culture 

Deep frying of Samosa somewhere in NCR, Delhi/ Pic source Tawarikh Khwani

Samosa, one of the most popular Indian snack is triangular fried savory made up of white flour (Maida) filled with potatoes, peas & lentils. The North Indian version is little big larger in size in comparison with other places in India. The another version of Samosa can be found in walled city of Delhi, Hyderabad, & cities of Pakistan is filled with minced meat, & chicken. However when we traced the old culinary accounts & write ups, the roots of this hyperlocal savory is located somewhere in Middle East. Abolfazl Beyhaqi, an eleventh century Persian historian mentioned it in his book” Tarikh-e Beyhaghi” regarding this savory. He described this as a snack that was relished in the mighty court of Ghaznavid empire. It seems to be introduced to the Indian subcontinent the 13th or 14th century from Central Asia.
The word Samosa (Hindi समोसा /Urdu سموسہ ) can be traced to the Persian word Sambosag ( سنبوساگ). Even today in Arab world, one can find multiple variants of the Sambusak from filling of minced meat to the sweet dry fruits fillings. The culinary account from the 10th to 13th centuries Arab world mentioned recipes of Sambosak. An article of BBC Magazine ( 2016) articulate in length the story of its migration from Arab world to Central Asian & then crossing the Hind Kush mountains to the Indian Subcontinent. Lets review the glimpses of the historical narratives of our hyperlocal snack.


Over the following centuries the samosa made its way over the icy passes of the Hindu Kush and into the Indian subcontinent.
What happened along the way explains why Professor Pant regards the samosa as the ultimate “syncretic dish” – the ultimate fusion of cultures.


The story of India as told by a humble street snack, Justin Rowlatt, June 2016 Retrieved from
https://www.bbc.com/news/amp/magazine-36548445

A culinary account titled ” Foundations of Ethnobotany: 21st century perspectives by Sudhir Chandra” gave some historical narratives of this hyperlocal snack: “According to Amir Khusro (Urdu poet of Delhi) 1300 AD observed that the royal set of Delhi like Samosa prepared “rom meat, ghee & onions”. Ibn Battuta (renowned traveler, 1334 AD) wrote about Sambusaki (minced meat cooked with almonds, pistachios, onions, spices placed inside the thin envelope of wheat & deep fried in desi Ghee. The samosa recieved Royal stamp in Ain-I-Akbari”. 

Again we can find a Amir Khusrow famously framed the riddle (do sukhane):
“Samosa  kyun na khaya? Joota kyun na pehna? “Talaa na tha.”
[Translation: Why wasn’t the samosa eaten? Why wasn’t the shoe worn?  the shoe didn’t have a sole (also called talaa.)

Niʻmatnāmah-i Nāṣirshāhī (Nasir Shah’s Book of Delights) written for Sultan of Malwa Ghiyas al-Din Khilji (1469-1500) has recipes for Samosa with illustrations showing cows being milked (right) and Sultan Ghiyas al-Din seated on his throne (left), attended by servants. 


Recipes for samosas (see below) with illustrations showing cows being milked (right) and Sultan Ghiyas al-Din seated on his throne (left), attended by servants Source: British Library, African & Asian Blog

A recipe for samosa translation from the Niʻmatnāmah-i Nāṣirshāhī (Nasir Shah’s Book of Delights):
“Mix together well-cooked mince with the same amount of minced onion and chopped dried ginger, a quarter of those, and half a tūlcha [a measure] of ground garlic and having ground three tūlchas of saffron in rosewater, mix it with the mince together with aubergine pulp. Stuff the samosas and fry (them) in ghee. Whether made from thin course flour bread or from fine flour bread or from uncooked dough, any of the three (can be used) for cooking samosas, they are delicious”

English translation by “Norah Titley ” an expert of Persian manuscript who worked at British Library . Source:
Asian & African Studies Blog, British Library, Retrieved from
https://blogs.bl.uk/asian-and-african/2016/11/nasir-shahs-book-of-delights.html

According to Abul Fazal, the legendary author of Ain-i-Akbari & one of the gems of the Mughal Emperor Akbar’s court: “the Sambusak was relished by the Mughals & mainly non-vegetarian“. It was Portuguese who brought the potatoes to Indian subcontinent & the Samosa got its most popular filling.

Now in contemporary India many regional variations are found. In East Indian states ( Bihar, West Bengal, Odisha, & Jharkhand, one can find a smaller version with fine cut cooked potatoes mixed with pea nuts, raisins, & cashew. Its popular with the term “Singhara”. As we moved to the Deccan (Hyderabad), the city of erstwhile Nizams, here you will find more like primitive or its middle eastern congener (Sambosa) that is more like a flakes & filled with minced meat. Here it got the name “Luqma” that has Urdu origin known as bite.

A post of “Shingara” from Dhaka by Food blogger Kikhaiben

While moving to the Punjabi “dhabas’, and street stalls, it is served with a chick pea curry called ‘channa’. A type of the Chaat samosa popular as Samosa Chaat is topped with yoghurt, tamarind chutney, finely chopped onions, and masala. In Mumbai, the local snack, the Paav version of Samosa is quite popular.

An Insta post of Samosa from the Delhi by the Food blogger, Mizan Siddiqui who runs the handle #Dillikabhukkad
Samosa Paav from Mumbai, Maharashtra, an Insta post of Food Blogger Hungry-Forver

Now back in Middle East, the Sambusak still hold the ground as one of the widely popular snack. When the month of fasting, the Ramzan (Ramdan) arrived, the Sambusak got the lead over all other popular snacks. On snack shops you can find the endless number of Sambusak preparations from sweet form to the meat minced sub types along with vegetarian sub type made up of potatoes, onions, carrots, lentils & cheese.

Naan, a leavened Asian bread

Historical time line of leavened bread by Indo Islamic Culture

The Persian word Naan (نان) is the term used for the flat leavened bread that is prepared in traditional tandoor. Today it forms one of the most popular thick flat bread served with South Asian foods in India, Pakistan & Bangladesh.

Stuffed Tandoori Naan from India/Pic source: Wikiimages

In present Iran, the term is generally used to mention any kind of bread. According to Merriam Webster dictionary the term Naan is defined as “a round flat leavened bread especially of the Indian subcontinent” that was first used in English language in 1828. Historically, the remnants of the tandoors/Clay oven has been found from the remains of antiquity such as Indus valley  & its contemporary civilizations in West Asia as cited by the culinary writer, Vir Sanghvi in his book “Rude Food: The Collected Food Writings of Vir Sanghvi”. In central Asian countries, the term “Tandyr Nan” is used in Kazak, & “Tandir Non” in Uzbek languages for the leaved bread. Historically, the process of leaving was first started by Egyptian bread makers somewhere around 300 BC where they used yeast for leaving of the bread. The release of CO2 by the yeast results in lighting of bread & gave a fluffy appearance.

Tandyr nan baking in Kashgar, Xinjiang province in China/Pic source: Wikiimages

The first usage of the term “Naan” in Indian culinary context appeared during the late 13th century in days of Turkish Sultans. It appeared that an average Indian household goes for the flat bread (Chapati) as it was cumbersome & expensive to manage the tandoor (oven) in household. So the Naan became synonymous with commercial outlets or with the lavish kitchens of the royals. An article by Indian express cites evolution of Naan.

 

However, the first recorded history of Naan found in the notes of the Indo-Persian poet Amir Kushrau, dates this unleavened bread to 1300 AD. Then Naan was cooked at the Imperial Court in Delhi as naan-e-tunuk (light bread) and naan-e-tanuri (cooked in a tandoor oven). During the Mughal era in India from around 1526, Naan accompanied by keema or kebab was a popular breakfast food of the royals.


Food Story: How Naan and Kulcha became India’s much-loved breads , Story by Madulika Dash,
https://indianexpress.com/article/lifestyle/food-wine/food-story-how-naan-and-kulcha-became-indias-much-loved-breads/

With the time, the “Naan” was evolved all across south Asia & adjoining Persia with multiple variants. Taftun or Taftaan one such variant of Persian Naan is quite popular in subcontinent also, where the addition of milk, yoghurt, and eggs along with saffron & cardamom gave special softness & flavors to the leavened bread.  Now in subcontinent you can find its variants from “Afghani Naan” to the “Roghni Naan”. The post-Taliban Afghan immigrants brought the first hand flavors of “Afghani Naan” in capital city of India. The dough used by them is heavier than local bakers, & the bread is marked with the designs that were made by using wooden stamp.

Afghani Naan Pic Source: Wikiimages

Picture of Tamees prepared by Afghani chef in Saudi Arabia Source: Tawarikh Khwani

In Gulf countries, the “Naan” is quite popular among local Arabs. Its seems to be equally relish by them as it has been a staple bread for South Asian expatriates. Mostly these bakeries are run by Afghans or Pakistani Pasthuns. Though the size of the bread is larger than its South Asian congener i.e, typical tandoori Naan as here the dough size is around five hundred grams. In Indian context we can find great diversities of the local bread from” Chapati” to “Puri”, the Naan holds its significant place. From alleys of historic Shahjahanabad to the old city of Lucknow, one can find all the diverse varieties of “Naan” from breakfast to dinner.

A talk with Ziya Us Salam

Story of Delhi based author, columnist & social commentator by Rehan Asad

Ziya Us Salam is a prolific author & columnist with an experience of more than twenty four years. He is currently affiliated with Frontline, the Hindu. The Delhi based author has contributed books covering diverse titles from cinematic history to main stream sociopolitical issues of contemporary Indian politics.

Portrait of Mr. Ziya Us Salam somewhere at Riyadh by Rehan Asad

During his short visit to Riyadh in Saudi Arabia, I found a chance to explore glimpses of his writing journey from childhood days to the columnist & author. His books on sociopolitical & cultural issues of contemporary Indian problems were widely accepted among the readers.

With ancestral roots from Rampur, Mr. Ziya Us Salam was born at Delhi in 1970. His father Mufti Abdul Dayem Sahab was an illustrious Islamic scholar who had written many scholarly works on Islamic sciences in Urdu & Arabic Language. His formal education was started from BlueBells School International, Kailash colony, a public school of international repute established in 1957. During conversation he recalled, how his father break the stereotypes & myths that were projected around the Islamic scholars in those days. Both son & daughter were brought up in a syncretic environment & availed the best accessible modern education with equitable opportunities.  Ziya Us Salam ended up as a successful writer where as sister became a medical doctor. On 5th November 1983, Mufti Abdul Dayem Sahab departed from this world for the heavenly abode when Ziya Us Salam was around thirteen years. His resting place is located in the graveyard on Bahadur Shah Zafar Marg, Delhi. For the coming formative years of life, the mother played key role in his upbringing. After completion of senior secondary from Abner Memorial School (Delhi), he joined Bachelors at Saint Stephens College that was affiliated with Delhi University. Though his journey of writing was started from College days but the formal job in journalism was started in 1995. From the childhood days, the noted literary & social commentator has a passion for print media journalism. For him, the career as a journalist & author seems to be destined as he had a fascination for the written words from early days of his life. Recalling his childhood days, he said: “When I was in grade V, I used to scribe the handwritten notes from different columns of the newspapers. After compilation, I used to distribute the Photostat copies of my notes among the friends in my colony at Lajpatnagar. I was in grade VII when first of my article was published”.

In his long journey of journalism & writing, he has worked with times of India, statesman & from last nineteen years working with Hindu group. Currently is an associate editor. As literary & film critic, he has penned down many titles of cinematic history reviewing the work of Bollywood & its connection with Nehruvian socialist days. He firmly believed that Holy Quran is the living document that provides guidance on all aspects of life. He further added that in Islam their is no division between theological, secular & scientific learning as he cited the verse “My Lord increase me in my Knowledge”. The noted author has a great hope & belief in the syncretic values of India. All his works & writings are in a direction to deliver the justice for the victims of hate crime. Its about breaking the stereotypes, & building the bridges, clarifying the myths surrounded over by Islamophobia. In last section there is a succinct overview of his social writings that was a great contribution by him in last one year.

For video stories subscribe to our YouTube
A talk with Mr. Ziya Us Salam where he articulates his early days of life & reflecting on his journey of writings with emphasis on his social write ups.

“Till Talaq Do Us Part, penguin, 2018” breaks the stereotypes created around the Muslim women in the shape of triple talaq. The book articulate about the rights Muslim women avails for the divorce based on authentic Islamic jurisdiction. His book “Of Saffron Flags & Skull Caps, Sage, 2018” is a reflective account based on his observations, academic studies & multiple explorations of the real life examples on marginalization of Muslim communities in India.  In fact author, a firm believer of Unity in diversity, showed a deep concern in writing over the rising polarization & extremism that has deep impact on tarnishing the syncretic fabric of Indian culture & society.

https://www.frontline.in/books/article24807783.ece Prof. Mohammad Sajjad wrote a rich & succinct review for the book “Of Saffron Flags & Skull Caps” authored by Ziya Us Salam

Gepostet von Rehan Asad am Donnerstag, 30. August 2018

Lynch files: The forgotten saga of victims of hate crimes, Sage, 2019” is an explorative journey of tragic stories of the victims who lost their lives by the rabid mob. The author compares lynching as more lethal & demoralizing with traditional communal riots that also carried the baggage of guilt along with it.


Veteran journalist and peace activist John Dayal said that Salam’s book is not a “book for Muslims, who have been the major victims of lynchings, but a mirror to India.” Recalling his journeys with Karwaan-e- Mohabbat’s visits to all the victims of lynching, he said that there was a sinister pattern to the incidents- counter cases of illegal cow slaughter have been filed against the surviving family members, especially the male youth.

Saurav Datta, ‘Mob lynchings are the new communal riots’: Lynch Files author Ziya Us Salam, National Herald, 13 Feb, 2019.
https://www.nationalheraldindia.com/india/ziya-us-salam-lynchings-are-the-new-communal-riots

Hazrat Mualana Waqaruddin: A write up by Dr. Shams Jilani


شیخ طریقت حضرت مو لانا مفتی وقار الدین قادری رحمت اللہ علیہ سابق شیخ الحدیث دار العلوم امجدیہ۔۔ شمس جیلانی

حضرت مو لانا مفتی وقارالدین صا حب یکم جولائی١٩١٥ءمیں مو ضع پو ٹاکھمریا ضلع پیلی بھیت یو پی میں قؤم ارایں کے ایک بہت بڑے زمیندار گھرانے میں پیدا ہو ئے جو کہ کئی مو اضعات کا مالک تھا۔ ان کے والد کا اسم گرامی حمید الدین تھا جن کے چار بیٹے اور دو بیٹیاں تھیں جن کے نام امین الدین ،تا ج الدین، وقار الدین اور صغیر الدین تھے۔ حضرت مو لانا وقار الدین صا حب کا نمبر اپنے بھا ئیو ں میں تیسرا تھا۔ ان کے والد نے تین بچو ں کو انگریزی تعلیم سے آرا ستہ کیا امین الدین صا حب ، تا ج الدین صا حب نے ریلوے میں ملا زمت اختیار کی اور صغیر الدین صاحب فو ج میں چلے گئے۔ چارو ں صاحبزادوں کا انتقا ل کراچی میں ہوا اور وہیں آسودہ خا ک ہیں ۔ جبکہ حضرت مو لانامرحوم کا رجحان شروع سے ہی دین کی طر ف تھا۔ لہذاان کے والد نے جو خود بھی ایک مذہبی آدمی تھے۔ ان کی خواہش کا احترام کر تے ہو ئے اعلیٰ حضرت امام احمد رضا صا حب مر حوم کے قائم کر دہ مدرسہ میں جو کہ بی بی جی مسجد بریلی میں قائم تھا اور اسوقت تک ایک بڑی در سگاہ بن چکا تھا ، اس میں ان کوبرائے دینی تعلیم دا خل کر ادیا۔ وہاں سے انہو ں نے دستار فضیلت جہاں تک مجھے یاد پڑتا ہے١٩٤٤ ءمیں حاصل کی اور اس کے بعد وہیں در س دینے لگے۔ اسوقت وہاں حضرت مو لانا سردار احمد صا حب( حال وارد فیصل آباد ) انچا رج تھے ۔ یہ سلسلہ ١٩٤٧تک جاری رہا ۔ پاکستان بننے کے بعد وہ نرا ئن گنج( ڈھاکہ )ہجرت فر ما گئے پھر چٹا گانگ میں اپنا دار العلوم قائم فر ما یا اور ایک اچھی خا صی تعداد طالب علموں کی اپنے گرد جمع کر لی جو کہ دیکھتے ہی دیکھتے سیکڑوں سے تجا وز کر گئی۔ چو نکہ انکو چار و ں سلسلوں سے خر قہ ِخلا فت ملے ہو ئے تھے۔ لہذا وہاں انہو ں نے اچھے خا صے مر ید بھی بنا ئے۔ کیو نکہ وہاں اسکی ضرورت بھی اسلیئے تھی کہ جہا لت اتنی  بڑھی ہوئی تھی کہ علم ِدین نہ ہو نے کے برا بر تھا۔ ہندوستان سے سال کے سال علما ءصا حبان تشریف لا تے اور اپنا بھتہ وصول کر کے واپس چلے جا تے۔ لو گوں کو فا تحہ دینا اور نماز ِ جنازہ پڑھانابھی نہیں آتی تھی۔جو تھوڑی بہت شد بدھ رکھتے تھے، وہ رقم لیکر نماز ِ جنازہ پڑھاتے تھے۔ لہذا جہاں لا وارث میتوں کے کفن دفن کے لیئے چندہ ہو تا تھا وہیں مولویصاحب کی فیس بھی نماز جنازہ پڑھا نے کی مد میں چندے میںشامل ہوتی تھی۔

فاتحہ کے لیئے اکثر ں نذرانہ دیکر جس کی جنتی گنجا ئش ہو تی ایک سال دو سال کی فا تحہ ایک بو تل میں پانی بھر کر پھُنکوا لیتا۔اور جب فا تحہ دلانا ہو تی تو اس میں سے چند قطرے ٹپکا دئے جاتے اور فا تحہ ہو جاتی۔ سب سے زیادہ پڑھا لکھا ضلع نوا کھا لی کا سمجھا جا تا تھا جس کے بارے میں مشہور تھا کہ وہا ں گیارہ لا کھ آبادی ہے اور اس میں سے پانچ لا کھ مولوی ہیں ۔ وہ واحد ضلع تھا جو علما ءکے معاملے میں خود کفیل تھا۔ ان کے علم کے معیار کااندا زہ آپ اس سے لگا سکتے ہیں کہ کشور گنج ضلع میمن سنگھ میں میرے پاس ایک ملا زم نوا کھالی کا تھا۔ رمضان آگئے میں نے اس سے پو چھا نظام الدین تم قر آن کی تلاوت نہیں کر تے؟ تو اس نے جواب دیا کہ اگر میں قر آن پڑھا ہوا ہوتا تو یہا ں کیو ں آتا ،اپنے ہا ں کی کسی مسجد میں مو لوی نہ لگ جاتا۔ اس وقت وہاں علما ءمیں ایک ہی مشہو ر نام تھا جو کہ دیو بند کے فارغ التحصیل تھے ۔ ان کا نام تھا مو لانا اطہر علی جو کشور گنج میں رہتے تھے اور انکا دار العلوم بھی تھا۔ جو بعد میں نظامِ اسلام پا رٹی کے بانی بنے ۔یہ صورت حا ل تھی جب حضرت مو لا نا مفتی وقار الدین صا حب نے وہاں علم کا چشمہ جا ری کیا ۔ وہاں آپ اکثر لوگوں کے نام کے ساتھ مو لوی لکھا دیکھیں گے، مگر اس سے آپ ان کو دینی عالم نہ قیا س فر ما لیں۔ کیو نکہ یو پی اور بنگا ل میں مسلما ن وکیلو ں کو بھی مولوی صاحب کہا جا تا تھا ۔اس لیئے کہ وہ شریعت کا قانون پڑھے ہو ئے ہو تے تھے، اور عدالتو ں میں ور اثت، طلا ق وغیرہ کے مسلما نوں کے مقد ما ت لڑتے تھے۔

 مو لا نا مفتی وقار الدین صا حب وہاں تئیس چو بیس سال تک علم کے در یا بہا تے رہے اور اس دوران ، چرا غ سے چراغ جلا کر بہت سے عالم اور مدرسے قائم کر دیئے حتیٰ کہ مشرقی پا کستان میں بے چینی پیدا ہو ئی اور ان کے شا گردوں نے یہ را ئے دی کہ اب آپ کا یہا ں رہنا مناسب نہیں ہے۔ مگر مو لانا کو اپنے مشن سے عشق تھا لہذا انہوں نے پہلے تو ان کا مشورہ نہیں مانا۔ اور شدت سے مخالفت کی مگر ایک دن نہ جانے کیا ہوا کہ صبح کو جب سو کر اٹھے تو فر مانے لگے ۔ میں نے  مغربی پاکستان جانے کا فیصلہ کر لیا ہے ۔ جو انکے عقیدتمند تھے انہو ں نے اخذ کر لیا کہ حضرت کا یہ فیصلہ کوئی راز رکھتا ہے اور شاید مشرفی پاکستان پر کو ئی بڑی تبا ہی آنے والی ہے ۔ وہاں کی در سگاہ آپ نے شاگرد وں کے سپرد کی خود چلے آئے ۔ انکے شا گردوں کو دکھ تو بہت ہوا مگر انہوں نے تعرض اس لیئے نہیں کیاکہ وہاں اس سے پہلے جن لوگوں کی پاکستان بننے سے پہلے اجا رہ داری تھی۔ وہ ان کی جان کے درپے تھے۔ کہ انہوں نے علم کو عام کر کے ان کا کاروبار خراب کر دیا ، شاگردوں کو خطرہ یہ تھا کہ اس بد امنی کا فا ئدہ اٹھا کر وہ کہیں ان کو نقصان نہ پہو نچا ئیں ۔

یہا ں آکر دستگیر میں انہو ں نے ایکسو بیس گز کا ایک پلا ٹ خرید لیا۔ اسوقت اسکی قیمت صرف سات سو پچاس روپیہ تھی وہ بھی چار اقساط میں اور پھر اس پر دو کمروں کا مکان بنا لیا، جس میں وہ تا حیات رہتے رہے ۔ کیونکہ وہ انتہائی قنا عت پسند انسان تھے۔ ایک زمانے میں ضیا ءالحق نے بہت سے علما ءکو اسلام آباد میں پلا ٹ بانٹے اور انہوں نے بیچ کر پیسے بھی بنا ئے ۔وہ اس وقت رویت ِ ہلال کمیٹی کے متعلق تھے مگر انہوں نے نہ لیا اور کمیٹی کی رکنیت بھی جب اس نے بغیر چاند دیکھے پو رے ملک میں عید کروانے کا حکم دیا، تو اس کے منہ پر ما ر کر چلے آئے۔

 سقوط مشرقی پاکستان کے بعد بہت سے لوگ لا پتہ ہو گئے تھے ۔یا جمع پونجی کہیں دبا کر مر گئے تھے، جس کی ورثا کو خبر نہیں تھی۔ مو لانا ایک تعویز ان کو عطا فر ما تے جو کہ ایک چو زے کے پیر میں باند ھنا ہوتا اور اس کو جب وہاں چھو ڑا جا تا تو وہ دفینے پر جا کر کھڑا ہو جا تا۔ اس طر ح بہت سے دفینے ورثا کو پہنچا ئے ،مگر خود کسی سے کچھ نہ لیتے تلاش گم شد گان میں بھی انہوں نے لو گوں کی اپنے علم سے کا فی مدد فر مائی ۔ اور چھوٹی چھو ٹی کرا مات تو اتنی ہیں کہ اس کے لیئے ایک الگ کتاب چا ہیئے ۔

یہاں جب وہ مشرقی پاکستان سے تشریف لا ئے تو مو لا نا ظفر علی نعمانی مرحوم دا ر العلوم امجدیہ کے مہتمم تھے جوکہ ان کے بڑے معتقد تھے ۔ اس کا اندازہ آپ اس سے لگا سکتے ہیں کہ ایک مر تبہ اس خاکسار سے پو چھا کہ کیا آپ لوگ بھی ان کی اتنی ہی عزت کرتے ہیں، جتنی ہم کر تے ہیں۔ تو راقم نے جواب دیا کہ الحمد للہ ہم لوگ ان کی آپ سے زیادہ عزت کرتے ہیں۔ کیونکہ میں ان کے علمی مقام سے تو واقف تھا ۔مگر اس سے واقف نہ تھا کہ وہ اپنے دور کے قطب بھی ہیں ۔ بعد میں نعمانی صاحب نے مولانا سے در خواست کی اب وہا ں تو آپ کا واپس جا نا مشکل دکھا ئی دیتا ہے۔ آپ علم کی روشنی یہا ں پھیلا ئیے اور وہ دار العلوم امجدیہ سے منسلک ہو گئے پھر آخری دم تک وہیں در س و تدریس کے ذریعہ دارالعلوم امجدیہ کی خد مت کرتے اور علم کی رو شنی پھیلا تے رہے۔ الحمد اللہ یہا ں بھی ان کے شاگردوں کی تعداد ہزارو ں میں ہے ۔مگریہاں ان کے مریدین کی تعداد انگلیوں پر گنی جا سکتی ہے ۔نہ جانے کیوں وہ یہاں آنے کے بعد مرید بنا نے میں بڑے محتا ط ہو گئے تھے اور بڑی مشکل سے کسی کو مر ید بنا تے تھے ۔ مغربی پاکستان ہجرت کرنا مو لا نا کے خاندان کی یہ چو تھی ہجرت تھی۔ پہلی وہ جب کے ان کے آبا و اجداد یمن سے آکر سر سہ(مشرقی پنجاب) میں آباد ہو ئے ،دوسری جب کھمر یا میں سر سہ سے آکر آبا د ہو ئے اور تیسری مشرقی پاکستان تشریف لا ئے اور چھو تھی یہ یعنی کراچی آمد۔ سرسہ سے ان کے جد امجد جناب دوست محمد صا حب وہاں پر ١٧٨٠ءمیں آکر آباد ہو گئے تھے۔ ان کا شجرہ نسب اس طر ح ہے ۔ وقار الدین ابن ِ حمید الدین ابن ِ فخر الدین ابن ِ محمد یو سف ابن ِحسن محمد ابن ِ شاہ محمد ابن دوست محمد۔اس سے آگے کاشجرہ نہیں ملتا ۔مگر محشر انبا لوی مرحوم کے مطابق قبیلہ آل ِ ذور عین جس کے وہ فرد تھے حارس الرا ئش کے زمانے میں یمن سے آکر پنجاب میں آبادہو ا تھا۔

 راقم حروف کا ان سے بہت ہی پرا نا رشتہ تھا در اصل کھمریا جس کا میں نے ذکر کیا ہے، وہا ں سے میری پر دادی میری والدہ اور میری بیوی اور ایک بہو کا وہیں سے تعلق تھا۔ اور ان کے برادر ِ حقیقی تاج الدین صا حب میرے حقیقی خا لو تھے۔ اس کے بعد ان کے بھتیجے ،ہما یوں تاج میرے داماد اور پھر میری چھو ٹی بیٹی عظمٰی کی ان کے صا حبزادے جمیل وقار کے ساتھ شادی ہو ئی اور اس کے بعد میرے چھو ٹے بھا ئی اظہر کمال سے جو کے آجکل جد ہ میں ہیں ان کی صا حبزادی نگہت کی شادی ہو ئی اور بھتیجے نیر وقار کی میری بھانجی حنا سے شادی ہو ئی ۔ان رشتوں کی بناپر آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ میں نے انہیں کتنے قریب سے دیکھا ہو گا ۔

 نہ جا نے کیا با ت تھی کہ وہ شروع سے ہی مجھے اور میری بیوی کو بہت ہی پسند فر ما تے تھے اور ہمیشہ میرے بتا ئے ہو ئے دینی مسائل کی درستگی کی تو ثیق فر ماتے تھے ۔لیکن مجھے ان کے زیادہ قریب آنے کا مو قعہ جب ملا جبکہ میں نے ١٩٧٤ ءمیں تعلیم کی وجہ سے بچو ں کو میر پور خا ص سے کراچی منتقل کردیا اور اپنے خا لو تاج الدین صا حب کی کوٹھی کرا یہ پر لی، کیو نکہ انکے کنیڈا چلے جانے کی وجہ سے مو لانا ان کے مختار ِ عام تھے لہذا مجھے انہیں بہت قریب سے دیکھنے کا موقعہ ملا۔ آدمی چونکہ لین دین سے ہی پر کھا جا تا ہے۔ میں نے انہیں قریب سے دیکھا اور مجھے انہوں نے پر کھا اور رات ،دن ہم میں محبت بڑھتی گئی ۔ جبکہ اسوقت تک یہ سارے رشتے نہ تھے صرف وہی ایک رشتہ تھا کہ وہ خالو کے بھا ئی تھے ۔ باقی رشتے انہیں کی پسندیدگی کی بنا پر بعد میں طے پا ئے ۔لیکن ان رشتوں سے بھی پہلے وہ رو حانی رشتہ قائم قائم ہو ا کہ مجھے ان سے شر ف ِ بیعت حا صل ہو گیا۔

 قصہ یوں ہے کہ مجھے اللہ نے بچپن سے تھوڑا سا نوا زا ہوا تھا جس کی ابتدا ءیہ تھی کہ میں جب پیدا ہو ا تو میرے نا نا فدا حسین صاحب نے حضرت مہر بان علی شا ہ (رح) اکو ڑہ خٹک والو ں سے در خواست کی کہ اس بچے کا نام رکھد یجئے جوکہ میری پیدا ئش پر خو ش قسمتی سے وہاں موجود تھے۔ تو انہو ں نے میرا نام محمد شمس الدین جیلانی رکھا۔ لو گو ں نے کہا اس نام کے لو گ بڑے جلا لی ہو تے ہیں،تو انہوں نے فر ما یا کہ اس کا نام توتبدیل نہیں ہو سکتا، البتہ آپ احمد لگا لیں تو جمالی ہو جا ئے گا ۔ لہذا میرا نام اس زمانہ کے رواج کے مطابق محمد شمس الدین احمد جیلانی رکھا گیا۔ پھر جب میں نے اپنی ادبی زندگی میں قدم رکھا ،تو میں نے حضرت عبد القادر جیلانی سے عقیدت کی بنا پرادبی نام شمس جیلانی اختیار کر لیا۔ یقیقنا ًیہ اس نام کی بر کت تھی کہ وہی مشہور ہوا اور اب سب اسی نام سے جا نتے ہیں ۔جیسا  کہ میں پہلے عرض کر چکا ہو ں کہ اللہ سبحانہ تعالیٰ کا شروع سے ہی میرے اوپر کر م تھا کہ اس نے ایک ہدا یت یافتہ زندگی عطا فر ما ئی جس میں میری نا نی کی تربیت کا بڑا دخل تھا کہ وہ خود ایک ولی صفت خاتون تھیں میرے کانوں میں انکی میٹھی آواز ہمیشہ رس گھولتی رہتی تھی کہ حضور (ص) ایسا کرتے تھے اور تم بھی ویسا ہی  کیاکرو۔ میں نے کو شش کی ،اللہ سبحانہ تعالیٰ نے نوازا اور میں نے کچھ مراحل جوانی تک حضرت مہر علی شاہ  (رح)کی رہنما ئی میں ہی طے کیئے جبکہ انکا وصال اس وقت ہو گیا تھا جبکہ میں سا ڑھے چار سال کا تھا۔ اس کے بعد رہنما بدلتے رہے جن کی میں تفصیل میں جانا منا سب نہیں سمجھتا۔  مگر جیسے کہ بض پیغمروں  (ع)تک کی یہ خوا ہش رہی ہے،کہ کچھ اپنی ظاہری آنکھوں سے بھی دیکھیں، میری بھی یہ خوا ہش تھی کہ میں بھی بظاہر کسی سے بیعت ہو جا ؤ ں۔ مر د حق کی تلا ش میں ہر ایک کے پیچھے بھا گتا پھرا،مگر ہر جگہ ما یو سی ہوئی۔ کہ میں ان میں وہ معیار ڈھو نڈتا تھا جو حضرت عبد القادرجیلانی  (رح)نے بتا یا ہے کہ ًاگر کو ئی آسمان پر بھی اڑتا ہو پانی پر چلتا ہو ۔ مگر اس کی ایک حرکت بھی خلاف سنت ہو۔ تو وہ پیر نہیں ہو سکتا، شیطان ہے“ قصہ مختصر وہ ایک تشنگی تھی جو باقی تھی کہ مجھے عار ضہ قلب لا حق ہوا ۔ میں اب سوچنے لگا کہ مجھے شاید کوئی بھی نہیں ملے گا؟کیو نکہ اس تلاش میں میری عمرپچاس سال سے تجاوز کر چکی تھی اور ابھی تک کو ئی بھی مر د ِ حق نہیں ملا تھا۔ میں یہ سوچ رہا تھا کہ میں یہ حسرت ساتھ ہی لیئے چلا جا ؤ ں گا ۔ میں نے ایک دن بہت ہی گڑگڑا کر خدا سے دعامانگی کہ یا اللہ تونے میری ہر خواہش پوری فرما ئی میری یہ خواہش بھی پو ری فر ما دے ۔ چو نکہ آج تک الحمد للہ میری کو ئی خوا ہش اللہ تعا لیٰ نے رد نہیں فر ما ئی، وہ جلد یا بدیر پوری ضرور ہو ئی ۔لہذا اس کی رحمت جوش میں آگئی اور مجھے رہنما ئی ملی ، میں حیرت زدہ رہ گیا کہ میں گھر میں بہتا سمندر چھو ڑ کر ادھر ، ادھر دریا ڈھو نڈتا پھررہا تھا ۔ صبح ہو ئی تو میں نے پہلا کام یہ کیا کہ مو لانا کو فون کیا ۔ میں ان کے معمو لات سے واقف تھا کہ وہ صبح کو جلدی اٹھ جا تے ہیں اور پھر معمولات سے فارغ ہوکر دارالعلوم تشریف لے جا تے ہیں ۔ چو نکہ وفورِ شو ق غالب تھا، میں نے فون کرنے میں بہت ہی جلدی کردی، مو لانا کی آواز سنا ئی دی، حیرت سے انہوں نے پو چھا خیر تو ہے اتنے صبح ہی صبح ؟ میں عرض کیا کہ میں آپ سے بیعت ہو نا چاہتا ہوں ۔ جو کہ قر بت کی بنا پر میں سمجھ رہا تھا کہ بہت معمو لی سی بات ہے ،وہ فر ما ئیں گے آجا ؤاور بات ختم۔ مگر جواب نے مجھے حیرت میں ڈالدیا ،فر مانے لگے میں تو اب کسی کو بیعت نہیں کر تا ہوں ۔ میں نے ضد کی، فر مایا اچھا میں کل بتا ؤنگا ۔ اب دوسرے دن میں ابھی منتظر ہی تھا کہ صبح ہوتو میں ان سے پو چھوں کہ کیا حکم ہے؟ مگر فون کی گھنٹی بجی اور دوسری طر ف مو لا نا تھے ، اب میری متحیر ہو نے کی با ری تھی ۔ فر ما رہے تھے کہ میں تمہیں خود بیعت کر نے آرہا ہوں؟ میں نے کہا نہیں ، میں حا ضر ہو تا ہوں کہ یہ آداب مریدی کے خلاف ہے فر ما نے لگے ۔نہیں تم بیمار ہو میں آتا ہوں ۔میں نے کہا نہیں آپ وہیں انتظا ر فر ما ئیے، میں پہو نچ رہا ہو ں ۔میں پہو نچا تو مو لا نا مصلے پر تشریف فر ما تھے ۔جو میرا حصہ مجھے دکھا یا گیا تھا، وہ وہاں رکھا ہوا تھا، پو چھا کس سلسلہ میں بیعت ہو نا چا ہتے ہو  ؟میں نے عرض کیا سلسلہ قادریہ میں ، ہنس کر فر ما نے لگے کیوں اس لیئے کہ اس میں حضرت عبد القادر جیلانی (رح) ہیں ؟ میں نے عرض کیا جی ہاں یہ ہی وجہ ہے اگر آپ مہر بانی فر ما ئیں تو ان سے با قاعدہ نسبت قائم ہو جا ئے۔ انہو ں نے ا س چیز کو شہادت کی انگلی اور انگو ٹھے اٹھایا ،نصف دانتوں سے کا ٹ کر خود تنا ول فر ما ئی، با قی بچی ہوئی میرے منہ میں دیدی اور مجھ سے بعیت لے لی ۔حالانکہ وہ اس کے بعد اٹھارہ سال حیات رہے ،مگر نہ انہوں نے کبھی خلا فت کی با ت کی نہ میں نے ما نگی ، شاید یہ میرا مقدر نہ تھا اور اللہ کو مجھ سے وہ کام نہیں کو ئی دوسر کام  لینا تھا؟ نہ مانگنے کی وجہ یہ تھی کہ یہا ں بھی وہی مسئلہ پھر میرے آڑے آیا کہ حضرت عبد القادر جیلانی (رح) نے فر ما یا کہ کبھی کسی مر تبہ کی خود خواہش مت کرو ،اگر وہ خو د عطا فر ما ئے گا تو صلا حیت بھی دے گا۔تم ما نگو گے تو ممکن ہے تمہیں نبھا نا مشکل ہو جا ئے ۔وقت گزرتا گیا کہ وہ گھڑی آپہو نچی کہ میں یہاں تھا اور وہ وہاں، اور ان کا بلا وہ آگیا ۔ یہ ١٦ستمبر١٩٩٢ ء کی صبح تھی کہ میری بیٹی نے نیو یارک سے فون کیا کہ ابھی ابھی پا کستان سے فو ن آیا ہے کہ مو لانا چچا کا انتقال ہو گیا ۔ یقین نہیں آیاکہ وہ ابھی تو نیو یارک تشریف لا ئے تھے میں بھی وہیں پہونچ گیا تھا، ان سے فیض حا صل کر نے اور ان کے پیچھے نما زیں پڑھنے ۔وہ میری ان سے آخری ملا قات تھی۔ تھو ڑی دیر میں میڈیا میں بھی خبر آگئی ۔ پھر ان کی تہجیزاور تکفین کی بھی خبر آئی کہ جنازے میں لا کھو ں آدمیوں نے شر کت کی ۔ اسی کی طر ف میں نے اپنی منقبت میں اشارہ کیا ہے کہ ان کی عظمت کا را ز ان کے بعدکھلا۔جبکہ ان کے جنازہ کو گھر سے دار العلوم امجد یہ تک پہنچنے میں صبح سے شام ہوگئی۔ جہاں پر انہیں اپنے پرانے رفیق حضرت علا مہ مصطفیٰ الازہری کے پہلو میں آسودہ خاک ہو نا تھا ۔

اب آپ پو چھیں گے وہ کیسے آدمی تھے ۔ مختصر جواب یہ ہے کہ وہ اپنے عقائد میں بہت ہی پختہ اور بہت ہی متقی انسان تھے۔ مگر رواداری انہو ں نے کبھی ترک نہیں فر مائی ۔ کبھی کسی کو نہیں ٹو کا کہ تم یہ کیو ں کر رہے ہو، ایسا کیو ں کر رہے، ہو ویسا کیوں کر رہے ہو؟ مسئلہ کسی نے پو چھا تو بتا دیا ،نہیں تو چشم پو شی سے کام لیتے، ہر وقت چہرے پر مسکراہٹ کھیلتی رہتی ، وہ زاہد ِ خشک نہ تھے حس ِ مزاح بھی ان میں بے حد تھی۔ ایک مر تبہ میری بہو میرے ساتھ ان کے گھرگئیں ،وہ زنا نخانے میں چلی گئیں اور میں مولانا کے پاس ان کے کمرے میں چلا گیا ،مجھ سے پو چھنے لگے تمہا رے ساتھ کو ن آیاہے ؟میں نے کہا شبنم فر ما نے لگے شبنم اور دوپہر کو ۔،انکساری کا یہ عالم کے فیا ض کا وش ایڈو کیٹ انہیں پہچانتے نہ تھے،  جب مو لانا نورانی(رح) نے سنی کا نفرنس  دار العلوم امجدیہ میں اپنی جما عت اہل َسنت والجماعت قائم کرنے کے لیئے بلائی تو اس میں شرکت کے لیئے دارالعلوم امجدیہ وہ بھی میرے ساتھ میر پور خاص سے آئے، مو لا نا وہا ں تشریف فر ما تھے، فیاض کاوش نے مولانا سے کہا ذرا وہ کتاب سامنے جو الماری میں رکھی ہے اٹھا دیں۔ بجا ئے کسی شاگرد کو آواز دینے کے  مولانا خود  ہی اٹھے اور انہیں لاکر پیش کر دی ۔ جب انہیں معلوم ہوا کہ یہ شیخ الحدیث مفتی وقار الدین صا حب ہیں تو بہت شر مندہ ہو ئے ۔ نورانی چہرا ،گندمی رنگ ،لمبا قد اور چھریرے بدن کے مالک تھے ،فر ماتے تھے کہ خوف ِخدا اور فربہی دونوں ساتھ نہیں رہتے ۔ اور اکثر وہ یہ حدیث سنا یا کرتے تھے کہ “ قیامت کے قریب ایسے علما ءہونگے جن کے پیٹ بڑھے ہو ئے ہو نگے ان سے بچنا “ بیوی بچو ں کے ساتھ بہت شفیق بہو بٹیوں کے ساتھ شفیق ، چھو ٹوں کے ساتھ مہر بانی کا سلوک اور بڑوں کے سامنے با ادب ۔ میں نے انکاکو ئی کام کبھی خلاف سنت نہیں دیکھا۔ ان کے ہا تھوں پربہت سے لوگ ایمان لا ئے۔ مگر کہیں ذکر نہیں کو ئی تشہیر نہیں ،اخباروں میں تصویر نہیں ۔وہ تصویروں سے بہت پر یشان ہو تے تھے ہر محفل میں پہلے سے ہی منع فر مادیتے تھے کہ میری تصویر نہ لی جا ئے ۔ مگر اخبار نویس اور بچے چھپ کر تصویر لے لیتے۔ عمو ما “نکاح کی تقریبات میں بچے بہت تنگ کرتے ۔ پریشان ہو تے اور فر ماتے کہ ہر بچے کے پا س تو کیمرہ ہے میں کس طرح بچو ں ، ادھر منہ کر تاہوں تو دوسرا ادھر سے تصویرلے لیتا ہے۔ یہ علم و عرفان کا سورج ١٦ستمبر ١٩٩٢ءکو ہمیشہ کے لیئے غروب ہو گیا۔انا للہ وانا الیہ راجعون ہ

AAh Saayadi Shahid Duniya se Hue Rukhsat

Sad demise of Hazrat Sayyad Shahid Hasni Noori

On 21st Rajab 1440 Hijri (29 March/2019), a shocking news regarding the death of Hazrat Sayyad Shahid Razvi (May Allah be please with him) has passed a wave of deep grief among his hundred thousands of the followers across the country & centers of Qadri Razvi Barkati sufi order all over the world. I was on my visit to the holy city of Madinah Muwwara when this devastating news received to me close to the dawn prayers. It was indeed a moment of great grief. An Islamic scholar, Grand Mufti of Rampur & spiritual successor of Hazrat Mufti Azam Hind Mustafa Raza Khan (Aleh Rahma), he was one of the distinguished star of Noori Barkati Qadri order in India. In the modern era of 21st century as a spiritual guide his life reflects true sense of austerity, a core attribute of Sufism. He was born on 25th November 1952 at Malik Nagli District Rampur. His father Sayyad Saifullah Shah Hasni was among the descendants of great Sufi of Rampur, Hazrat Sayyad Sabbir Shah Hasni (Aleh rahma). Completing his memorization of Quran & initial teachings of Islam, he was admitted to Furqania School of Islamic teachings at Meston Ganj, Rampur in 1970 for higher education in Islamic studies. In 1974, he passed the examination of Fazile Dinyaat conducted by Allahabad board. In year 1980, he became a spiritual follower (Mureed) of Hazrat Mufti Azam Hind Mustafa Raza Khan (Aleh Rahma) & hardly a year after; he was blessed by him with permission of spiritual succession (Khilafaa). In addition he received the permission for Hadith from various distinguished scholars of Hadith such as Hazrat Allama Mufti Akhtar Raza Khan (Aleh Rahma), Hazart Mufti Jahangri (Aleh Rahma), & Maulana Tahseen Raza Khan Qadri Razvi (Aleh Rahma).

Resting & reading room of Hazrat Sayyad Shahid Hasni Noori Sahab

Hazrat Khwaja Muinddin Chishti (Rahmtullah Aleh) once quoted these three attributes regarding the true awliyas (friends of Allah): “To listen the plight of oppressed, help needy & fill the hungry stomach”. Sayyad Shahid Hasni Noori (Aleh Rahma) reflected all three attributes in his personality.

He was also blessed with permission of spiritual succession in other orders of Sufism such a Naqshbandiyaa, & Mujadidia. He started his teaching career from Jamia Furqania, Dept. of Arabic as the head of the teachers in 1979 & then onward during his entire life that span around forty years, he served as the Professor (Sheikh Ul Hadith) of Hadith in Al Jamia Islamia in old Rampur. In 1984, he was married with Sayyada Nasreen Bibi, the daughter of blessed Sufi Hazrat Sayyad Sadiq Ali Shah Bukhari of Tanda, District Bareilly who was at that time hereditary administrator of an old sufi Khanqah of Hazrat Sayyad Bismillah Shah Qadri Jamali (Aleh Rahma). As common with true savants of Allah, the personal life is also an examination by their Almighty Lord. Hazrat lost his wife in year 2002 after the long debilitating disease leaving behind a responsibility of five daughters & five sons. The hardships didn’t end here, three years later on the beloved son also passed away in year 2005. With huge moral, social, religious, academic responsibilities on his shoulders, he was firm in the taking the lead role in the upbringing of his nine kids alone without even thinking for the second marriage.

He formed Idara Tahqiqate Razvia Jamalia, a research unit for Islamic studies & also the forum for the social services in the region. Weather it was solving a family feuds, mishaps in someone family, larger relief work in any natural disaster or a propagation of the true values of Islam, one can find Hazrat in all the spheres of social life. With such hectic engagement, he also contributed a lot in Islamic writings & authorship. From the articles in renowned magazines up to the authorship of various books in Arabic & Urdu language covering diverse topics of Islamic studies, he left great scholarly imprints in contemporary Indian Hanafi School & Matrudi beliefs. From biographies of Fazele Bareilly Maulana Imam Ahmad Raza Khan, Maulana Irshad Ahmad Rampuri, Maulana Salmatullah Rampuri, Hazrat Shah Qutub Uddin Madni (May Allah be please with them) to challenging titles such as “Babri Masjid Tareekh ke Aiyne me”, “the permissibility of Eid Mawlid”, his pen was determined to scribe to truths of time & history. In total he had contributed more than hundred accounts in Urdu & Arabic language. His personality & scholarship both were highly admired & adored by the pious & great contemporary scholars of his time. Hazrat Mufti Akhtar Raza Khan (Alleh Rahma) & Amine Millat Hazrat Professor Sayyad Amin Miyan Qadri reflected both spiritual love & respect of Sayyad Shahid Miyan Noori in their accounts. As the founder, & the senior most teachers, his services for Al Jamiat Ul Islamia Qadim Ganj were incredible. Thousands of the students had attained education from him in last forty years. In addition, he was also working to start the girls section where they could undertook Islamic education along with modern education. He intend to starts the girl’s school was up to grade X & then upgrade it as a degree college. Though he was ailing with chronic diabetes & cardiovascular disease for which a bypass surgery was also done but this doesn’t affect his working. In few words, he was like a one man institution who contributed towards various disciplines of Islamic teachings, running Islamic centers, social work, & hectic travelling both within the country & abroad. During his life time, he performed Hajj three times & Umrah on several occasions. He visited to many European & Middle eastern countries where he delivered talks, sermons & propagate the true beliefs of Islam. Even the day before he passed he attended the ceremonies of “Khatme Bukhari” held at Jamia Razvia, Kamry, Rampur where he blessed the students with his supplications & affiliated all the students in Qadri order of Sufism.

Death is an inevitable truth of life where Holy Quran is saying “” Every soul shall taste death” -(surah 3: verse 185). But for the true savants of Almighty Allah it’s only a transition from one world to other. As Hazrat Mawlana Jalauddun Rumi wrote these couplets:  
When you see my corpse is being carried, don’t cry for my leaving, I am not leaving, I am arriving at eternal love, when you leave me in the grave, don’t say goodbye
remember a grave is only a curtain for the paradise behind

The couplets of 13th century Sufi seems contextual for 21st century true faqeer & wali who passed away quietly from this world to meet his eternal love in the next world. How the hundreds of the weeping hearts consoled themselves by the separation of their master. One such close associate, Muhammad Salman Raza Faridi Siddiqui Misbahi wrote a heart wrenching poetry on departing of Hazrat Sayyad Shahid Shah Hasni Noori (Aleh Rehma). Few couplets are here: Lafz Lafz Aanson Hain, harf harf nam; apnaKis tarah sunayen ham ranj o Gham apna; Aah Sayyadi Shahid Duniya se Hue Rukhsat; Hai judai se soona rooh ka haram apna ; Maut ek Alaam ki maut hai zamane ki ; Kar rahi hai duniya aaj gham raqam apna

On Sunday, dated 31 March, 2019 his burial prayer was held at the ground of the historic Rampur fort. Thousands of the followers all across the India & other countries attended his last prayers. His son Maulana Sayyad Faizan Jamali Noori led the last prayers. Allama Mufti Hazrat Asjad Raza Khan, Hazrat Ahsan Raza Khan, Maulana Tasleem Raza Khan & many other notable Islamic scholars from his fraternity attended his prayers. Ex Cabinet Mr. Azam Khan, MLA Abdullah Azam, & many other people from different walks of life attended to pay homage to their Qazi, Mufti & beloved scholar. Close to Ajaypur graveyard he was buried at 12.15 pm in close proximity of famous Sufi of Rampur, Hazrat Shah Wilayat (Aleh Rahma). A condolence gathering was held under the guidance of Allama Hazrat Asjad Raza Khan & other scholars at Dargahe Ala Hazrat, Bareilly, which was center of his spiritual & scholarly affiliations during his entire life.

The obituaries also came from the scholars outside his fraternity. The Vice president of Muslim personal law board, Dr. Qalbe Sadiq offered his condolence by a letter with following words: “We had lost a great scholar & guide of Rampur who was true follower of the Prophet in the terms of piety & pious behavior”.

He is survived by the four sons & five daughters. The responsibilities of his missionary work came up on the shoulders of his eldest son, Maulana Sayyad Faizan Miyan Noori who is twenty eight years old. Received guidance & education from his blessed father, he is presently undertaking advanced courses Arabic & Islamic studies at Al Azhar University, Cario. May Allah elevates the levels of Sayyadi Shahid Miyan Hasni Noori.

About Author: Dr. Rehan is a medical doctor & a history enthusiast. He is passionate for writing on history, culture & people stories. His personal blog is www.rehanhist.com